Meer Taqi Meer

Meer Taqi Meer's real name was Muhammad Taqi.He is obviously the one of the best poet of all times.Meer Taqi Meer was bon in Agra on August 1723.Meet Taqi Meer's father died when he was young.1782 Meer Taqi Meer Migrated to Lucknow and remained there fro the rest of his life.Unlike many other Great urdu poets,Meer Taqi Meer got famous in his life time.People were used to give him termendus respect.His complete work"kulliaat e Meer Taqi Meer" is consist of 13,585 couples,and have six diwans inside it.His Mansnavi "Muamlat e Ishq" is considered one of the best poem in urdu litrature.Meer Taqi Meer used Persian terms and idioms in his poetry at various places.Meer Taqi Meer's age was the age when Urdu language was growing and persian words and persian compositions were very in,in urdu language.Meer Taqi Meer's work is a part of Pakistani schools/colleges/universities curiculms.Scores of his Ghazals have been sung by Many singers.Meer Died on Friday,21 september 1810.

meer taqi meer
meer taqi meer aik sher
meer taqi meer ghazal
meer | mata e dil
best ghazals meer taqi meer
meer | milne lage ho
meer taqi meer best poetry
meer | ishq ki kon
meer poetry
meer | dekh ke dil
meer taqi meer designed
meer |jan hai tu
meer taqi meer famous poetry
meer | hasti apni
meer taqi meer ghazals
meer | kab tak ye
meer taqi meer nazki us ke lab
meer | nazki us ke
meer taqi meer sher
meer | kiya kahiyeh

میر تقی میر کے مشہور ترین اشعار

الٹی ہوگئیں سب تدبیریں کچھ نہ دوا نے کام کیا

میرے سنگِ مزار پر فرہاد

تیرے قیدِ قفس کا کیا شکوہ

جس سر کو غرور آج ہے یاں تاج وری کا

تیغ ستم سے اس کی مرا سر جدا ہوا

لاکھوں فلک کی آنکھیں سب مند گئیں ادھر سے

ہم اور تیری گلی سے سفر دروغ دروغ

کیا میں بھی پریشانیِ خاطرسے قریں تھا

آرزوئیں ہزار رکھتے ہیں

کیا کہیے کیا رکھے ہیں ہم تجھ سے یار خواہش

مہر کی تجھ سے توقع تھی ستم گر نکلا

موسم ہے ، نکلے شاخوں سے پتّے ہرے ہرے

میر دریا ہے سنے شعر زبانی اس کی

مطلق نہیں ادھر ہے اس دل ربا کی خواہش

ہم رو رو کے دردِ دلِ دیوانہ کہیں گے

کیا کہوں تم سے میں کہ کیا ہے عشق

عشق میں بے خوف و خطر چاہئے

وہ جو پی کر شراب نکلے گا

ہستی اپنی حباب کی سی ہے

تا بہ مقدور انتظار کیا

یارو مجھے معاف رکھو، میں نشے میں ہوں

عشق میں جی کو صبر و تاب کہاں

اس کا خرام دیکھ کے جایا نہ جائے گا

دیکھ تو دل کہ جاں سے اُٹھتا ہے

فقیرانہ آئے صدا کرچلے

ابتدائے عشق ہے روتا ہے کیا