daag dehlvi

read daag dehlvi poetry here

daag dehlvi ghazals
a ghazal by daag dehlvi
daag dehlvi
daag | kiya zouq hai
daag dehlvi poetry
daag | aarzu hai wafa

بت کو بت اور خدا کو جو خدا کہتے ہيں

غضب کيا تيرے وعدے کا اعتبار کيا

يہ قول کسي کا ہے کہ ميں کچھ نہيں کہتا

کس نے کہا کہ داغ وفا دار مرگيا

کيا ذوق ہے کیا شوق ہے سو مرتبہ ديکھوں

ستم ہي کرنا جفا ہي کرنا نگاہ الفت کبھي نہ کرنا

آپ کا انتظارکون کرے

بات میری کبھی سنی ہی نہیں

بھنویں تنتی ہیں خنجر ہاتھ میں ہے تن کے بیٹھے ہیں

بہت ہی مختصر تھا وصل کا دن

تم کو چاہا تو خطا کیا ہے بتا دو مجھ کو

خط میں لکھے ہوئے رنجش کے پیام آتے ہیں

ساتھ شوخی کے کچھ حجاب بھی ہے

کب وہ چونکے جو شراب ِ عشق سے مستانہ ہے

کچھ آپ کو بھی قدر ہماری وفا کی ہے

کہا نہ کچھ عرض ِ مدعا پر

کہتے ہیں جس کو حور وہ انسان تمہیں تو ہو

مانا کہ لطف عشق میں ہے ہم مگر کہاں

نہ آیا نامہ بر

نہ ہوا یوں گنا ثواب کے ساتھ

بڑا مزا ہو اگر یوں عذاب ہو واعظ

وہ جلوہ تو ایسا ہے کہ دیکھا نہیں جاتا

یا رب ہے بخش دینا بندے کو کام تیرا

یاں دل میں خیال اور ہے واں منظر اور

یوں چلیے راہ ِ شوق میں جیسے ہوا چلے

یہ دل لگی بھی قیامت کی دل لگی ہو گی